اورنج لائن کا ٹھیکہ غیر تجربہ کار اسلحہ کا بزنس کرنیوالی فرم کو دیا گیا: چودھری پرویزالٰہی

لاہور(31جنوری2016) پاکستان مسلم لیگ کے سینئرمرکزی رہنما و سابق نائب وزیراعظم چودھری پرویزالٰہی نے کہا ہے کہ جنگلہ بس اور ڈالر بناؤ اورنج لائن پر سالانہ 40 ارب روپے کی سبسڈی پنجاب پر بوجھ ہو گی اور اس خطیر رقم کے ضیاع سے عوام ہسپتالوں میں ادویات اور غریبوں کے بچے تعلیم سے محروم رہیں گے کیونکہ حکومت ہسپتالوں کی حالت بہتر بنانے کی بجائے انہیں ٹھیکوں پر دے رہی ہے اور 1122 جیسی ریسکیو سروس کیلئے بھی چندہ مانگ رہی ہے۔ سابق وزیراعلیٰ نے یہاں اپنی رہائش گاہ پر صحافیوں کے سوالات کے جواب میں بتایا کہ اورنج لائن کی تعمیر کا ٹھیکہ اس شعبہ میں ایسی غیرتجربہ کار فرم کو دیا گیا ہے جس نے اس طرح کا پراجیکٹ کبھی کیا ہی نہیں اور وہ اسلحہ کا بزنس کرتی ہے۔ چودھری پرویزالٰہی نے اپنی حکومت کے انڈرگراؤنڈ ٹرین کے منصوبہ کو ختم کرنے کے بارے میں سوال پر کہا کہ ہم نے اس کا ٹھیکہ شنگھائی میٹرو ٹرین اور یورو ٹنل جیسے پراجیکٹ مکمل کرنے والی فرم کو دیا تھا، اس میں پنجاب کو کوئی خسارہ تھا نہ سبسڈی اور نہ ہی پنجاب حکومت کی کوئی انوسٹمنٹ لیکن ڈالر بناؤ نمائشی منصوبوں کے رسیا شہبازشریف کو یہ پسند نہیں تھا جبکہ ان کے اورنج لائن منصوبہ کیلئے 3فیصد شرح سود کے مقابلہ میں ہمارے منصوبہ کیلئے شرح 10 سالہ گریس پیریڈ کے ساتھ صرف 25ء0 فیصد تھی اور اس کی عوامی افادیت کے باعث ایشیائی ترقیاتی بینک نے اس پراجیکٹ نمبر 40573 کی منظوری کے تحت اس کیلئے فنڈز کی پہلی قسط بھی جاری کر دی تھی جو شہبازشریف نے لینے سے انکار کر دیا اس کی بجائے پہلے جنگلہ بس اور پھر ڈالر بناؤ ٹرین کے منصوبے شروع کر دئیے جبکہ ٹرین پر سالانہ 16 ارب، لاہور اور راولپنڈی میں جنگلہ بس پر 12,12 ارب روپے کے خسارہ میں ہر سال اضافہ ہو گا۔ انہوں نے کہا کہ ہر علاقہ میں عوام احتجاج کر رہے ہیں لیکن شہبازشریف نے اس تاریخی شہر کا حسن ختم اور پرانے دور اور بادشاہوں کی تمام عمارات کو تباہ کرنے کا عہدہ کر رکھا ہے۔

urdu-download

Share