تعاون کا شکریہ، تبدیلی کے سفر میں ایک ساتھ ہیں: وزیراعظم عمران خان کا چودھری پرویزالٰہی کو ٹیلیفون

وزیراعظم کی نیت نیک، سوچ مثبت، سعودی عرب کے بعد چین، ملائیشیاء میں بھی کامیابیاں ملیں گی، وزیراعلیٰ عثمان بزدار بھی بہت اچھا کام کر رہے ہیں: سپیکر

وزیراعلیٰ بنا تو خزانہ خالی تھا، عوامی فلاح پر کھربوں خرچ کر کے 100 ارب سرپلس چھوڑے، شہبازشریف کمیشن کے چکر میں 700 ارب کا مقروض کر گئے: پریس گیلری سے خطاب

لاہور(26اکتوبر2018) وزیراعظم عمران خان نے سپیکر پنجاب اسمبلی چودھری پرویزالٰہی سے ٹیلیفون پر رابطہ کیا اور اتحادی حکومت کے معاملات پر بات چیت کی۔ وزیراعظم نے پنجاب کے امور میں تعاون پر چودھری پرویزالٰہی سے اظہار تشکر کرتے ہوئے کہا کہ تبدیلی کے سفر میں ایک ساتھ ہیں، خواہش ہے کہ پنجاب میں تبدیلی کے معاملات کو آگے بڑھائیں۔ چودھری پرویزالٰہی نے وزیراعظم کو مکمل تعاون کا یقین دلاتے ہوئے کہا کہ آپ کو پنجاب سے مزید اچھی خبریں ملیں گی، وزیراعلیٰ عثمان بزدار بہت اچھا کام کر رہے ہیں، آپ کی نیت نیک، سوچ مثبت اور مقاصد اعلیٰ ہیں، سعودی عرب کے بعد انشاء اللہ آپ کو چین اور ملائیشیاء کے دورہ میں بھی کامیابیاں ملیں گی، آپ کی سربراہی میں ملک ترقی کرے گا، غریب اور عام آدمی کی حالت بہتر ہو گی۔ سپیکر چودھری پرویزالٰہی نے پریس گیلری کے اعزاز میں ظہرانہ دیا جس میں صوبائی وزراء فیاض الحسن چوہان، حافظ عمار یاسر، سیکرٹری اسمبلی محمد خان بھٹی بھی موجود تھے۔ انہوں نے خطاب کرتے ہوئے کہا کہ عمران خان نیک نیتی اور مثبت سوچ کے ساتھ ملک کو معاشی طور پر مضبوط کرنے کیلئے دن رات محنت کر رہے ہیں، وہ عام آدمی کی زندگی میں بہتری لانا چاہتے ہیں، وہ سعودی عرب سے بہت اچھا پیکیج لے کر آئے ہیں، یو اے ای سے بھی عنقریب مدد آئے گی جبکہ وزیراعظم چین کا کامیاب دورہ بھی کرنے والے ہیں۔ انہوں نے مزید کہا کہ وزیراعظم کی طرف سے کسانوں کیلئے بجلی کے بلوں میں 50 فیصد رعایت قابل تحسین ہے، شہبازشریف نے ہر شعبے اور منصوبے سے پیسہ بنایا، زراعت ہماری ریڑھ کی ہڈی ہے اسے بھی تباہ کر کے کسانوں کو بدحال کیا، عوامی فلاح و بہبود کا کوئی کام نہیں کیا، اورنج لائن، جنگلہ بس، نندی پور پراجیکٹ، ساہیوال کول پاور پلانٹ سمیت تمام منصوبوں میں کمیشن کھایا گیا۔ انہوں نے کہا کہ صحافیوں اور پریس گیلری سے میرا پرانا تعلق ہے، صحافیوں کی بہتری کیلئے پہلے بھی مثالی کام کیا اب بھی کروں گا، اچھے گھروں میں رہنا امراء کا ہی حق نہیں، اسی سوچ کے تحت میں نے ذاتی کوششوں سے صحافی کالونیاں بنائیں، لاہور میں اس کا فیز II بھی بنانا چاہتے ہیں تاکہ جو صحافی مکانوں سے محروم ہیں ان کو بھی گھر مل سکیں، اس سلسلے میں وزیراعلیٰ پنجاب سے بھی درخواست کروں گا۔ انہوں نے کہا کہ اپوزیشن ارکان اسمبلی نے گذشتہ تین اجلاس میں ایوان کا ماحول خراب کیا، چوتھی دفعہ سمجھانے کیلئے ایکشن لینا پڑا، سابق سپیکر نے بھی چار مرتبہ یہی ایکشن لیتے ہوئے ارکان اسمبلی کے اجلاس میں داخلے پر پابندی لگائی تھی، ہاؤس کمیٹی انکوائری کر کے رپورٹ پیش کرے گی کہ فرنیچر اور دیگر سرکاری املاک کو نقصان پہنچانے کا ذمہ دار کون ہے، کمیٹی ذمہ داران کے خلاف ایکشن بھی تجویز کرے گی۔ انہوں نے کہا کہ ہمارے دور کے منصوبے نواز اور شہبازشریف نے تعصب کی بنیاد پر بند کئے، اس سلسلہ میں بھی ایوان کی سپیشل کمیٹی بن چکی ہے جو کہ منصوبے بند کرنے کے ذمہ داروں کا تعین کرے گی اور موجودہ دور میں اضافی لاگت کی ذمہ داری فکس کرے گی جس کا ازالہ ذمہ داران سے کروایا جائے گا، ہمارے دور کے شروع کئے ہوئے ریسکیو 1122 کے محکمہ کو میڈیا نے شہبازشریف کی عوام دشمنی کی نذر نہیں ہونے دیا جس کیلئے میڈیا کا شکرگزار ہوں، جب میں نے وزارتِ اعلیٰ سنبھالی تو خزانہ خالی تھا، ہم نے محنت کی، خزانے میں پیسے لائے اور کھربوں روپے کے منصوبے مکمل کئے جب وزارتِ اعلیٰ چھوڑی تو سرپلس 100 ارب روپے خزانے میں موجود تھے، اب شہبازشریف صوبے کو 700 ارب کا مقروض کر گئے ہیں۔

Share