وفاق المدارس پاکستان کے نظریہ کی حفاظت کر رہے ہیں: چودھری پرویزالٰہی

اسلامی نظریہ ہی پاکستان کی بنیاد ہے، ایسے نصاب پر مکمل پابندی ہونی چاہئے جو اسلام اور توہین رسالت پر مبنی ہو

پاکستان اور پنجاب میں ایسا نصاب چھاپا جائے جسے علماء کرام منظور کریں، ذرائع ابلاغ، آن لائن یا سوشل میڈیا پر بھی مواد علماء کی منظوری کے بعد اپ لوڈ کیا جائے: جامعہ اشرفیہ کی سالانہ تقسیم اسناد کی تقریب میں گفتگو

لاہور(16جنوری2020) سپیکر پنجاب اسمبلی چودھری پرویزالٰہی نے وفاق المدارس العربیہ پاکستان کے زیراہتمام جامعہ اشرفیہ میں سالانہ تقسیم اسناد کی تقریب میں سیکرٹری جنرل وفاق المدارس قاری محمد حنیف جالندھری سے گفتگو کرتے ہوئے کہا کہ وفاق المدارس پاکستان کے نظریہ کی حفاظت کر رہے ہیں، اسلامی نظریہ ہی پاکستان کی بنیاد ہے۔ اس موقع پر مولانا عبدالرزاق سکندر، مولانا فضل الرحیم، مولانا انوار الحق، ڈاکٹر خالد محمود، پیر ذوالفقار نقشبندی، مفتی محمد طیب، قاضی عبدالرشید، ڈاکٹر فیاض رانجھا، مولانا اللہ وسایا، پیر اسد اللہ فاروق، مولانا ارشاد احمد سمیت دیگر علماء کرام موجود تھے۔ چودھری پرویزالٰہی نے امتحانات میں اعلیٰ کارکردگی کا مظاہرہ کرنے والے طلباء میں اسناد اور شیلڈز تقسیم کیں۔ انہوں نے کہا کہ پنجاب اسبملی میں قانون سازی کی جا رہی ہے جس کے مطابق ایسی غیر ملکی کتابوں اور نظریات پر پابندی لگائی جائے گی جو اسلام اور توہین رسالت پر مبنی ہو۔ انہوں نے کہا کہ پاکستان میں سوشل میڈیا پر بھی ایسی کتب اور لٹریچر پر پابندی لگائی جانی چاہئے اور ایسا نصاب فروخت کرنے پر بھی مکمل پابندی ہونی چاہئے، کوئی بھی ملکی و غیر ملکی دینی کتاب یا مواد علماء کونسل سے اجازت و سند کے بعد ہی پاکستان میں چھاپنے، بیچنے اور کسی بھی ذرائع ابلاغ، آن لائن، سوشل میڈیا پر اپ لوڈ کرنے کی اجازت دی جائے۔ اس موقع پر قاری حنیف جالندھری نے کہا کہ چودھری پرویزالٰہی نے ہمیشہ دینی اداروں کے مسائل حل کرنے میں بڑا اہم کردار ادا کیا ہے، دینی ادارے نہ صرف اسلام بلکہ پاکستان کے نظریہ کی حفاظت کیلئے مصروف عمل ہیں، محکمہ تعلیم کے ساتھ وفاق المدارس کی حالیہ میٹنگ میں طے ہوا ہے کہ دینی ادارے اپنے غیر ملکی طلبہ کو تعلیمی ویزہ کیلئے سرٹیفکیٹ جاری کر سکتے ہیں۔ انہوں نے کہا کہ اگر بھارت کے ساتھ جنگ ہوتی ہے تو دینی مدارس کے 30 لاکھ طلبہ پاک فوج کے ساتھ کھڑے ہیں۔

Share