عالمی امن کو درپیش خطرے کے تدارک کے مستقل بندوبست کیلئے توہین رسالت کی تشہیرپر پابندیاں عائد کی جائیں، پنجاب اسمبلی میں قرارداد منظور

ڈیڑھ ارب مسلمانوں کی دل آزار ی کو اظہار رائے کی آزادی کا نام نہیں دیا جا سکتا، پنجاب اسمبلی کا ایوان وفاقی حکومت اور حکومت پنجاب کی جانب سے ہفتہ رحمتہ للعالمین ﷺ منانے کا خیر مقدم کرتا ہے

سپیکر چودھری پرویز الٰہی کی زیر صدارت اجلاس میں فرانس میں توہین آمیز خاکو ں کی تشہیراور فرانسیسی صدر کی جانب سے متنازعہ بیان کے خلاف مذمتی قرار دار متفقہ طور پر منظور

مونجی کی فصل کی امدادی قیمت 23 سو روپے فی من مقرر کی جائے: پنجاب اسمبلی میں قرار داد متفقہ طور پر منظور

لاہور(10نومبر2020) پنجاب اسمبلی نے فرانس میں توہین آمیز خاکو ں کی تشہیراور فرانسیسی صدر کی جانب سے متنازعہ بیان کے خلاف مذمتی قرار دار متفقہ طور پر منظور کر لی۔ قرارداد پیش کرنے سے قبل وزیر قانون محمد بشارت راجہ، اپوزیشن لیڈر حمزہ شہباز شریف، ارکان اسمبلی خدیجہ عمر، سید حسن مرتضیٰ اور محمد معاویہ اعظم نے سپیکر چودھری پرویزالٰہی سے رولز آف پروسیجر صوبائی اسمبلی 1997ء کے قاعدہ 234 کے تحت قاعدہ 115 اور دیگر متعلقہ قواعد کو معطل کرکے قرار داد پیش کرنے کی اجازت طلب کی جس پر سپیکر نے ووٹنگ کروائی اور قواعد کی معطلی کی تحریک متفقہ طور پر منظور کر لی گئی۔ بعد ازاں وزیر قانون محمد بشارت راجہ نے قرارداد پیش کرتے ہوئے کہا کہ صوبائی اسمبلی پنجاب کا یہ ایوان فرانس میں توہین آمیز خاکوں کی تشہیر اور فرانسیسی صدر کی جانب سے اس پر متنازعہ بیان کی پرزور الفاظ میں مذمت کرتا ہے، اس طر ح کے واقعات سے نہ صرف دنیا بھر کے ڈیڑھ ارب سے زائد مسلمانوں کے جذبات مجروح ہوتے ہیں بلکہ عالمی امن، بھائی چارہ اور بین المذاہب ہم آہنگی بھی شدید خطرے سے دو چار ہو جاتے ہیں۔ اس ایوان کی رائے ہے کہ اظہار رائے کی آزاد ی کی غلط تشریح کی جاتی ہے، ڈیڑھ ارب مسلمانوں کی دل آزاری کو اظہار رائے کی آزادی کا نام نہیں دیا جا سکتا، کینیڈا کی وزیراعظم نے بھی تسلیم کیا ہے کہ اظہار رائے کی آزادی بغیر حدود و قیود کے نہیں ہو سکتی اور اس سے مختلف برادریوں کی بلاوجہ دل آزاری نہیں کی جانی چاہئے۔ امریکی ماہر فلکیات اور مورخ ڈاکٹر مائیکل ایچ ہارٹ نے 1978ء میں شائع ہونے والی اپنی کتاب ”تاریخ کی سو متاثر کن شخصیات کی درجہ بندی“ میں خاتم النبیین حضرت محمد ﷺ کو نہ صرف پہلا درجہ دیا بلکہ اس کا دفاع بھی کیا ہے۔ اس ا یوان کی یہ رائے بھی ہے کہ فرد واحد کے کسی فعل کا ذمہ دار پوری کمیونٹی کو نہیں ٹھہرایا جا سکتا، جس طرح نیوزی لینڈ کی مسجد میں 51 مسلمانوں کو شہید کرنے والے شخص کے فعل کو عیسائیت یا یہودی مذہب سے نہیں جوڑا جا سکتا، اسی طرح کسی فرد کے انفرادی فعل سے مذہب اسلام کو منسلک کرنے کی اجازت بھی نہیں ہونی چاہئے۔ یہ ایوان وفاقی حکومت سے مطالبہ کرتا ہے کہ اس معاملے کو اقوام متحدہ سمیت ہر عالمی فورم پر اٹھایا جائے اور یہ مطالبہ کیا جائے کہ جس طرح ہو لو کاسٹ کی تشہیر پر پابندیاں عائد ہیں اسی طرح توہین رسالت کی تشہیر پر بھی پابندیاں عائد کی جائیں تاکہ اسلاموفوبیا پر قابو پایا جا سکے اور عالمی امن کو درپیش خطرے کے تدارک کا مستقل بندوبست کیا جائے۔ یہ ایوان وفاقی حکومت اور حکومت پنجاب کی جانب سے ہفتہ رحمتہ للعالمین ﷺ منانے کا خیرمقدم کرتا ہے اور اسے عالم اسلام کے مسلمانوں کے جذبات کی ترجمانی اور عالمی امن کی جانب ایک اہم قدم قرار دیتا ہے۔ قرار داد پیش کئے جانے کے بعد سپیکر چودھری پرویزالٰہی نے قرارداد پر ووٹنگ کروائی جسے حکومتی اور اپوزیشن اراکین نے متفقہ طور پر منظور کر لیا۔ بعدازاں ارکان اسمبلی میاں محمد شفیع اور ملک ندیم کامران نے سپیکر چودھری پرویزالٰہی کی جانب سے اسمبلی رولز معطل کرکے قرار داد پیش کئے جانے کی اجازت ملنے پر مونجی کی فصل کے ریٹ میں اضافہ کے حوالہ سے قرار داد پیش کی۔ میاں شفیع محمد نے قرارداد پیش کرتے ہوئے کہا کہ اس ایوان کی رائے ہے کہ اس سال مونجی کی فصل زیادہ ہونے کی وجہ سے کسانوں کو اس کا ریٹ بہت کم مل رہا ہے جس سے پنجاب کا کسان بہت پریشان ہے، گذشتہ سال اس کا ریٹ 2300 روپے فی من تھا لہٰذا یہ ایوان وفاقی حکومت سے مطالبہ کرتا ہے کہ ٹریڈنگ کارپوریشن آف پاکستان کسانوں سے یہ فصل گزشتہ سال کے ریٹ یعنی 2300 روپے فی من کے حساب سے خریدنے کا انتظام کرے۔ بعدازاں ایوان نے یہ قرارداد بھی متفقہ طور پر منظورکر لی۔

Share