پاکستان اور ہندوستان کے مابین کشمیر ہی بنیادی مسئلہ ہے، ہم اقوام متحدہ کی قراردادوں کے مطابق تنازعہ کشمیر کا پرامن حل چاہتے ہیں: چودھری پرویزالٰہی

سپیکر چودھری پرویزالٰہی سے پاکستان میں یورپی یونین کی پہلی خاتون سفیر اینڈرولا کامی نارا کی ملاقات، موجودہ ملکی سیاسی صورتحال سمیت باہمی دلچسپی کے امور پر تبادلہ خیال

مسئلہ کشمیر پر سول و عسکری قیادت اور پوری پاکستانی قوم متحد ہے، مقبوضہ کشمیر میں انسانی حقوق کی پامالی عروج پر ہے، عالمی برادری اس کا نوٹس لے، یورپی یونین مسئلہ کشمیر کے پرامن حل میں اپنا کردار ادا کرے، آپ کا دورہ پا کستان اور یورپی یونین کے مابین تعاون کو بہتر بنانے میں اہم ثابت ہو گا

لاہور(06جولائی2021) سپیکر پنجاب اسمبلی چودھری پرویزالٰہی سے پاکستان میں یورپی یونین کی پہلی خاتون سفیر اینڈرولا کامی نارا نے یہاں ان کی رہائش گاہ پر وفد کے ہمراہ ملاقات کی۔ وفد میں سیاسی امور، تجارت اور مواصلات کے سربراہ مسٹر ڈینیئل کلاس، مسٹر چارلی اور سید خاور حسین انفارمیشن آفیسر شامل تھے۔ ملاقات میں موجودہ ملکی سیاسی صورتحال سمیت باہمی دلچسپی کے امور پر تبادلہ خیال کیا گیا۔ سپیکر پنجاب اسمبلی نے کہا کہ پاکستان اور ہندوستان کے مابین کشمیر ہی بنیادی مسئلہ ہے، ہم اقوام متحدہ کی قراردادوں کے مطابق تنازعہ کشمیر کا پرامن حل چاہتے ہیں، مسئلہ کشمیر پر سول و عسکری قیادت اور پوری پاکستانی قوم متحد ہے۔ انہوں نے کہا کہ مقبوضہ کشمیر میں ان دنوں انسانی حقوق کی پامالی عروج پر ہے عالمی برادری کو اس کا نوٹس لینا چاہئے، ہم امید کرتے ہیں کہ یورپی یونین مسئلہ کشمیر کے پرامن حل میں اپنا کردار ادا کرے گی اور خطے میں امن کی بحالی کیلئے بھارتی قیادت کو مقبوضہ کشمیر میں مظالم سے روکے گی۔ چودھری پرویزالٰہی نے یورپی یونین کی سفیر کو بتایا کہ موجودہ پنجاب اسمبلی نے ریکارڈ قانون سازی کی ہے، تعلیم، صحت، زراعت اور عوامی مفاد کے مختلف شعبوں کے اب تک 90 بل منظور کیے ہیں، حکومت عوام کو معیشت، سرمایہ کاری، سیاحت، تعلیم، معیاری طبی سہولیات کی فراہمی میں بہتری لانے کیلئے مختلف اقدامات کر رہی ہے۔ انہوں نے کہا کہ پاکستان یورپی یونین کے رکن ممالک کے ساتھ اپنے باہمی دوستانہ اور تجارتی تعلقات کو بہت اہمیت دیتا ہے، یہ دو طرفہ تجارتی تعلقات 2004ء سے تعاون کے معاہدے کے تحت چل رہے ہیں جبکہ تجارت اور سرمایہ کاری کو مزید بڑھانا بھی 2012ء سے یورپی یونین اور پاکستان کے مابین 5 سالہ منصوبے کا ایک حصہ ہے، یورپی یونین پاکستان کا دوسرا اہم تجارتی شراکت دار ہے، 2020ء میں پاکستان کی کل تجارت 14.3 فیصد ہے، یورپی ممالک میں پاکستانی برآمدات میں ٹیکسٹائل کو بڑی اہمیت حاصل ہے جو 2020ء میں پاکستان کی کل برآمدات کا 75.2 فیصد ہے۔ چودھری پرویزالٰہی نے کہا کہ یورپی یونین سے پاکستان کی درآمدات بنیادی طور پر مشینری اور ٹرانسپورٹ کے سامان (2020ء میں 33.5 فیصد) نیز کیمیکلز (2020ء میں 22.2فیصد) پر مشتمل ہیں، پاکستان اور یورپی یونین کے ممالک کے مابین پارلیمانی وفود کے تبادلے سے تعلقات کو مزید مستحکم کرنے میں مدد ملے گی، آپ کا دورہ پاکستان اور یورپی یونین کے مابین تعاون کو بہتر بنانے میں اہم ثابت ہو گا۔ انہوں نے کہا کہ بطور وزیراعلیٰ پنجاب ہم نے تاریخ میں پہلی مرتبہ اقلیتی امور کی وزارت قائم کی اور ان کیلئے فنڈز مقرر کئے، چرچز کی بحالی و مرمت سمیت کچی آبادیوں کو مالکانہ حقوق دئیے اور اقلیتوں کے تعلیمی ادارے چرچز کو واپس کئے۔ یورپی یونین کی سفیر اینڈرولا کامی نارا نے چودھری پرویزالٰہی کا شکریہ ادا کرتے ہوئے کہا کہ یورپی یونین پاکستان کے ساتھ تعلقات کو بڑی اہمیت دیتی ہے، تجارت کے حوالے سے پاکستان بڑا اہم ملک ہے، خصوصاً ٹیکسٹائل میں یورپی یونین پاکستان کے ساتھ تجارت کا مزید فروغ دینا چاہتی ہے۔

Share